library
life
Makkah_live
Madinah_live

اختلاف امت اور صراط مستقیم

the different between Sunnahسنت اور حدیث میں کیا فرق ہے ؟
ایک عجیب سا سوال ہے لیکن یہ ایک بہت بڑی حقیقت ہے اسی لیئے اس موضوع پر بیان آپ کی خدمت میں ہم پیش کر رہے ہیں۔
اس بیان میں چند اہم موضوعات پر مفصل تحقیق کی گئی ہے۔

۱۔فاتحہ خلف الامام۔
۲۔ نماز جنازہ میں سورۃفاتحہ پڑھنا۔
۳۔ تین طلاق کا مسئلہ۔
۴۔حالت حیض میں عورت کو طلاق دینا۔
۵۔تقلید کیوں کی جاتی ہے۔
اہل حدیث کہنا صحیح ہے یا اہل سنت کہنا۔

نوٹ: اپنی رائے سے ہمیں ضرور آگاہ کریں اس سے ہماری حوصلہ افزائی بھی ہوتی ہے اور مستقبل میں کس قسم کا مواد فراہم کیا جائے اندازہ لگانے میں آسانی رہتی ہے۔

namaz min waswase

نماز دین کا ایک بنیادی رکن ہے اور قیامت کے روز سب سے پہلا سوال ہی نماز کے بارے میں کیا جائیگا۔لھذا نماز کا اہتمام آپ ﷺ کے دور سے ابھی تک بہت زیادہ ہوتا چلا آیا ہے ۔
نماز کے دو حصے ہوتے ہیں ۔
۱۔ظاہری تقاضے پورے کرنا جیسے وضو،قبلہ رخ ہونا،پاک بدن اور پاک کپڑے ،پاک جگہ،قبلہ رخ ہونا،تمام جسم کے اعضاء کو سیدھا ہونا اور قبلہ رخ ہونا وغیرہ۔اور یہ شرائط نماز کی صحیح ادائیگی کے لئے ہیں۔
۲۔باطنی،ذہنی کیفیت کا بھی صرف اللہ رب العزت کی طرف متوجہ ہونا،دنیا اور دنیا والوں کے خیالات سے پاک ہونا،جان بوجھ کر خیالات کا ذہن میں لانا درست نہیں اور اگر بے اختیاری آجائیں تو انہیں دور کرنے کا حکم ہے۔حدیث شریف میں آتا ہے کہ بندہ مسجد میں ہو اور اسکا ذہن بازار میں ہو تو اللہ کے نزدیک وہ شخص بازار میں شمار ہوتا ہے اور اگر کوئی شخص بازار میں ہو اور اسکا ذہن مسجد کی فکر میں ہو تو اللہ کے نزدیک وہ شخص مسجد میں ہے۔
اسی موضوع پر حضرت مولانا طاہر حسین گیاوی مدظلم کا بیان آپ کی خدمت میں پیش کرنے کی ہم سعادت حاصل کر رہے ہیں امید ہے کہ  آپ کو پسند آئیگا۔

Deobandi, Barelvi differences in thinkingوہ کہتے ہیں نا کہ بات پڑھ کر اگر سمجھا جائے پھر سمجھ کر بیان کیا جائے تو فائدہ ہوتا ہے اور اگر صرف پڑھا جائے اور سمجھا نہ جائے تو فائدہ کیا الٹا نقصان ہوتا ہے۔ امید ہے کہ یہ قاعدہ آپ کو سمجھ آگیا ہوگا۔
اللہ جزائے خیر دے مولانا طاہر حسین گیاوی صاحب کو جنہوں نے دیوبندی ،بریلوی اختلاف کو پڑھا پھر سمجھا اور پھر بیان کیا اور اللہ گواہ ہے بیان سن کر ذہن بالکل صاٖف ہوگیا اور سمجھ آگئی کہ وجہ اختلاف کیا ہے اور اسکی بنیاد نا سمجھی پر ہے صرف ۔
ایک مجلس کے دو بیان ایک فائل میں جمع کیئے گئے ہیں۔
اصلاحی،علمی،فقہی گفتگو کے ساتھ ساتھ علمائے بریلی کے بعد اعتراضات کو قرآن وسنت و فقہ و عقلی دلائل سے رد کیا اور 1857ء میں جو انگریز کے خلاف جھاد ہوا تھا اس سے متعلق عجیب وغریب انکشافات کیے اور ساتھ ساتھ یہ بھی بتایا کہ جن عبارتوں سے علماء ہند پر کفر کے فتویٰ لگے تھے وہ کیا تھیں کیوں لکھی تھیں اور کس نے لکھوائی تھیں۔اور کفر کے فتویٰ کس بنیاد پر لگے تھے؟اور سعودیہ کے علماء سے فتویٰ کیا کہ کر لیا گیا تھا؟ جنہیں آج کافر کہتے ہیں اور جن کے پیچھے نماز نہ پڑھنے کا فتویٰ بھی دیا ہوا ہے۔حسام الحرمین کی حقیقت کیا ہے؟ المھند علی المفند کیوں لکھی گئی؟
نماز میں خیال آنا،ولی کی تصویر سامنے رکھ کر نماز پڑھنا، روضئہ رسول ﷺ پر نماز پڑھنے کے بارے میں کتاب بھار شریعت علماء بریلی کی کیا رائے ہے وغیرہ، انشاءاللہ یہ بیان سن کر علمی لحاظ سے بہت فائدہ ہوگا۔اور دیوبندی بریلوی اختلاف کی وجہ بھی سمجھ آجائیگی۔

talking to tahirul qadri sab




    

 

جناب طاہر القادری صاحب نے علم غیب ثابت کرنے کی کوشش فرمائیں اور واہ واہ ہوگئی کیا علم ہے حضور والا کا لیکن جب اس کلپ کو کئی بار سنا تو بات ہی کچھ اور نکلی جس کی طرف شاید حضور والا کا دیھان ہی نہیں گیا وہ یہ کہ ۔اہل سنت والجماعت کا یہ عقیدہے کہ اللہ رب العزت نے اپنے محبوب نبی ﷺ کو وحی کے ذریعہ بہت سی چیزوں کے بارے میں خبر دی اور بہت سی چیزوں کے بارے میں خبر نہیں بھی دی یعنی جن جن باتوں کا آپ ﷺ کو بتانا ضروری تھا بتادیا گیا اور جو باتیں آپ ﷺ کے لئے غیر ضروری تھی وہ آپ کو نہیں بتائی گئیں جیسے قیامت کس دن کس وقت قائم ہوگی،لکھنا،پڑھنا،یا شیطانی علم کالا جادو،فعال نکالنا، یہ نہیں بتایا گیا اب یہ دیکھیں کہ انسانوں کو کامیابی سے جنت ملیگی اور ناکامی سے جھنم تو خوش خبری اور ڈرانہ یہ دونوں نبی کے کام ہوتے ہیں لھذا آپ ﷺ کو خبر بھی دی اور دکھایا بھی ۔
 قیامت کون سے دن قائم ہوگی کس وقت قائم ہوگی ،یہ بات نہیں بتائی دیکھیں: سورہ جن پارہ 29 آیت 25
{25} قُلْ إِنْ أَدْرِي أَقَرِيبٌ مَا تُوعَدُونَ أَمْ يَجْعَلُ لَهُ رَبِّي أَمَدًا

 

تلاشSearch

Thank you for using a compliant webbrowser.